ایس ای سی پی نے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ کے ضوابط میں ترامیم کا نوٹیفیکیشن جاری کر دیا | Graana.com Blog


Post Views:
3

اسلام آباد: سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان (ایس ای سی پی) نے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ (آر ای آئی ٹی) کے ریگولیٹری فریم ورک کو مزید فعال بنانے اور اس شعبے میں سرمایہ کاری کو فروغ دینے کے لیے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ ریگولیشنز 2015 میں اہم ترامیم کر دی ہیں۔

ان ترامیم کے حوالے سے ایس ای سی پی کی جانب سے باقاعدہ نوٹیفیکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے۔  ایس ای سی پی نے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ کے تحت سرمایہ کاری کا ایک نیا ماڈل پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ متعارف کروایا ہے۔

ضوابط میں کی گئی ترامیم میں ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ منصوبے میں سرمایہ کاری کرنے کی اہلیت میں تبدیلی، لازمی لسٹنگ کی مدت میں مزید مہلت، ریئل انویسٹمنٹ منصوبے کے ٹرانسفر کے وقت دو مختلف ویلوئرز، رائٹ شیئرز کے اجراء اور قرض کے حصول کے لیے ریئل اسٹیٹ مینجمنٹ کمپنی کی حد میں اضافہ وغیرہ شامل ہیں۔

ریئل اسٹیٹ انوسٹمنٹ ٹرسٹ ریگولیشنز میں نئی ترامیم کے تحت روایتی اور جدید تعمیراتی شعبے کو دو واضح حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے جن میں ایک بزنس ماڈل پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ جبکہ دوسرا ماڈل سرکاری یا پھر نجی انفرادی حیثیت میں کاروباری سرگرمیوں میں حصہ لے سکے گا۔

ایس ای سی پی کے مطابق ضوابط میں ترامیم کا مقصد ملک میں ایک باقاعدہ ریئل اسٹیٹ سیکٹر کا قیام اور اس شعبے میں ڈاکومنٹیشن کو فروغ دینا ہے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔۔




ایس ای سی پی نے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ کے ضوابط میں ترامیم کا نوٹیفیکیشن جاری کر دیا | Graana.com Blog


Post Views:
7

اسلام آباد: سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان (ایس ای سی پی) نے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ (آر ای آئی ٹی) کے ریگولیٹری فریم ورک کو مزید فعال بنانے اور اس شعبے میں سرمایہ کاری کو فروغ دینے کے لیے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ ریگولیشنز 2015 میں اہم ترامیم کر دی ہیں۔

ان ترامیم کے حوالے سے ایس ای سی پی کی جانب سے باقاعدہ نوٹیفیکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے۔  ایس ای سی پی نے ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ کے تحت سرمایہ کاری کا ایک نیا ماڈل پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ متعارف کروایا ہے۔

ضوابط میں کی گئی ترامیم میں ریئل اسٹیٹ انویسٹمنٹ ٹرسٹ منصوبے میں سرمایہ کاری کرنے کی اہلیت میں تبدیلی، لازمی لسٹنگ کی مدت میں مزید مہلت، ریئل انویسٹمنٹ منصوبے کے ٹرانسفر کے وقت دو مختلف ویلوئرز، رائٹ شیئرز کے اجراء اور قرض کے حصول کے لیے ریئل اسٹیٹ مینجمنٹ کمپنی کی حد میں اضافہ وغیرہ شامل ہیں۔

ریئل اسٹیٹ انوسٹمنٹ ٹرسٹ ریگولیشنز میں نئی ترامیم کے تحت روایتی اور جدید تعمیراتی شعبے کو دو واضح حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے جن میں ایک بزنس ماڈل پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ جبکہ دوسرا ماڈل سرکاری یا پھر نجی انفرادی حیثیت میں کاروباری سرگرمیوں میں حصہ لے سکے گا۔

ایس ای سی پی کے مطابق ضوابط میں ترامیم کا مقصد ملک میں ایک باقاعدہ ریئل اسٹیٹ سیکٹر کا قیام اور اس شعبے میں ڈاکومنٹیشن کو فروغ دینا ہے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔۔




ایف بی آر نے ٹیکس آڈٹ کے لیے آن لائن نظام متعارف کروا دیا


Post Views:
3

اسلام آباد: فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے ٹیکس آڈٹ اور تخمینے کی آن لائن الیکٹرانک سماعت متعارف کروادی۔

ایف بی آر کی جانب سے جاری کردہ اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ آئرس پورٹل پر الیکٹرانک ‏سماعت کا نظام فعال کردیا گیا ہے۔ آن لائن سماعت کے ذریعے ایف بی آر دفاتر اور ٹیکس گزار کہیں سے بھی سماعت کی کاروائی میں حصہ لے سکیں گے۔

ایف بی آر کے مطابق سماعت کو  نہ صرف ریکارڈ بلکہ دیگر قانونی اور انتظامی امور سے متعلق استعمال میں بھی لایا جاسکے گا۔

اعلامیے کے مطابق الیکٹرانک سماعت کا لارجر ٹیکس پیئر یونٹ (ایل ٹی پی) اسلام آباد، ریجنل ٹیکس آفس (آر ٹی او) کے راولپنڈی، فیصل آباد اور پشاور میں قائم دفاتر سے آغاز کردیا گیا ‏ہے۔

ایف بی آر کا کہنا ہے کہ الیکٹرانک سماعت کا نظام ایف بی آر کے تمام ذیلی دفاتر میں بھی متعارف کروایا جائے گا۔

اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ اس نظام کی مدد سے ٹیکس گزاروں کو ایف بی آر کے ذیلی دفاتر نہیں جانا پڑے گا جبکہ یکم جولائی ‏‏2021 سے براہ راست سماعتوں کا سلسلہ ختم کر دیا جائے گا۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




وزیرِ اعظم نے بلوچستان میں نوکنڈی تا مشخيل سڑک کا سنگِ بنیاد رکھ دیا


Post Views:
0

اسلام آباد: وزیرِ اعظم عمران خان نے جمعرات کے روز بلوچستان میں 103 کلومیٹر طویل نوکنڈی تا مشخيل سڑک کا سنگِ بنیاد رکھ دیا۔

وزیرِ اعظم نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس منصوبے سے صوبے میں روابط کا فروغ ہوگا جس سے معاشی سرگرمیاں جنم لیں گی۔

اُن کا کہنا تھا کہ صوبہ بلوچستان قدرتی وسائل سے مالامال ہے اور اُن کا مقصد ہے کہ اپنے 5 سالہ دورِ حکومت میں یہاں زیادہ سے زیادہ ترقیاتی منصوبوں کا آغاز کریں۔

اس موقع پر وزیرِ مواصلات مُراد سعید کا کہنا تھا کہ نیشنل ہائی وے اتھارٹی کا ریونیو 105 فیصد بڑھا ہے اور ملک بھر کے پسماندہ علاقوں میں متعدد روڈ پراجیکٹس پر کام جاری ہے تاکہ یکساں ترقی ہوسکے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔