لگژری کنڈومینیم پراجیکٹ گالف فلوراز کا مردان اور ملتان میں اوپن ہاؤس، ریکارڈ تعداد میں لوگوں کی شرکت | Graana.com Blog


Post Views:
4

پاکستان کے پہلے لگژری کنڈومینیم پراجیکٹ گالف فلوراز کا مردان اور ملتان میں شاندار انعقاد کیا گیا جس میں ریکارڈ تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔

ملتان اوپن ہاؤس کا انعقاد رماڈا ہوٹل ملتان سٹی میں کیا گیا جبکہ مردان اوپن ہاؤس کا انعقاد شیلٹنز میموریز میں کیا گیا۔ دونوں اوپن ہاؤسز میں تمام کورونا ایس او پيز کو ملحوظِ خاطر رکھا گیا۔

اس ضمن میں ڈائریکٹر گرانہ ڈاٹ کام فرحان جاوید کا کہنا تھا کہ قدرتی نظاروں اور جدید آسائشوں کے اس امتزاج، جِسے گالفرز پیراڈائز اور قدرتی نروانہ بھی کہا جاتا ہے، میں 523 ہائی اینڈ کنڈومینیمز ہیں جو کہ اسے جڑواں شہروں کی سب سے بہترین ریزورٹ لیونگ کمیونیٹی بناتا ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ اس پراجیکٹ کی تعمیر زور و شور سے جاری ہے جبکہ اس کی تکمیل 2025 تک کی جائے گی۔

گالف فلوراز پاکستان کا پہلا لگژری کنڈومنیم کمپلیکس ہے جس کا شمار ابھی سے ہی دنیا کے 20 بہترین لگژری ریزورٹ لیونگ کمیونیٹیز میں ہورہا ہے۔ اس کے ماسٹر پلان میں اسٹیٹ آف دی آرٹ فٹنس فیسلٹی، بچوں کے تفریحی پارکس، چہل قدمی اور جاگنگ کے ٹریکس، اسکائی گارڈن، ہیلی پیڈ اور ایک انفینٹی پول شامل ہیں۔

یہ کمپلیکس بحریہ گارڈن سٹی گالف کورس اور فلورا ہلز کے درمیان بنایا جا رہا ہے جس کا مقصد لوگوں کو پُر افزا اور پُر آسائش طرزِ زندگی سے روشناس کرانا ہے۔

یہ سسٹنیبل ریزیڈینشل ریئل اسٹیٹ پراجیکٹ ہے جس میں سٹوڈیو، 2 اور 3 بیڈروم اپارٹمنٹس ہیں اور یہ گارڈن سٹی بحریہ ٹاؤن کی شاندار لوکیشن پر واقع ہے۔ اس تک ڈی ايچ اے، بحریہ ٹاؤن فیز فائیو، سیون اور ایٹ سے باآسانی پُہنچا جا سکتا ہے۔ یہ پراجیکٹ کیپٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) سے منظور شدہ ہے۔

اس شاندار پراجیکٹ کے علاوہ امارات گروپ کے دیگر پراجیکٹس میں ایمیزون آؤٹ لیٹ مال، فلورنس گیلریا، امارات بلڈرز مال اور مال آف عریبیہ شامل ہیں، جو اسے مُلکی ریئل اسٹیٹ میں ایک نمایاں مقام دیتا ہے۔




سی ڈی اے کے کمرشل پلاٹس کی نیلامی، انعقاد 4 اور 5 اگست کو جناح کنوینشن سینٹر میں ہوگا


Post Views:
14

اسلام آباد: کیپیٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) نے اسلام آباد میں مختلف کمرشل پلاٹس کی نیلامی کا انعقاد 4 اور 5 اگست کو جناح کنوینشن سینٹر میں کرنے کا اعلان کیا ہے۔

نیلام عام کا آغاز 4 اگست کی صبح 10 بجے ہوگا۔

سی ڈی اے کا کہنا ہے کہ نیلامی میں فسیلیٹیشن ٹیم کا بھی بندوبست کیا گیا ہے جو کہ سرمایہ کاروں کو مختلف امور پر گائیڈنس فراہم کرے گی۔

اسی طرح بولی کی منظوری کی صورت میں 25 فیصد بڈ اماؤنٹ 30 دنوں کے اندر جمع کروائی جائے گی اور ایڈوانس ٹیکس پرو ریٹا بنیادوں پر لیا جائے گا۔

سی ڈی اے کا کہنا ہے کہ پوری پیمنٹ کی صورت میں تعمیر کا فوری آغاز ہوسکے گا اور منظوری کی دستاویز کے 30 دنوں کے اندر مکمل رقم کی ادائیگی پر 10 فیصد رعایت دی جائے گی۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




ایل ڈی اے کا شہر میں میاواکی جنگلات کی تعداد بڑھانے کا فیصلہ


Post Views:
0

لاہور: لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی (ایل ڈی اے) نے شہر لاہور میں میاواکی جنگلات کی تعداد بڑھانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

اس ضمن میں 96 ملین روپے مختص کیے گئے ہیں جو کہ پی ایچ اے کو جاری کیے جائیں گے۔

تفصیلات کے مطابق ایل ڈی اے کی 3 سکیموں یعنی ایونیو ون، جوبلی ٹاؤن اور محلہ وال میں ابتدائی طور پر میاواکی جنگلات کا قیام کیا جائے گا۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




ایل ڈی اے سٹی اپارٹمنٹس کی بیلٹنگ مکمل


Post Views:
0

اسلام آباد: وزیرِ اعظم عمران خان نے جمعرات کے روز اسلام آباد میں لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی (ایل ڈی اے) سٹی اپارٹمنٹس کی بیلٹنگ کی۔

ایل ڈی اے سٹی اپارٹمنٹس لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی اور نیا پاکستان ہاؤسنگ اینڈ ڈیولپمنٹ اتھارٹی کا مشترکہ منصوبہ ہے۔

دو ہزار سے زائد فلیٹ نیا پاکستان ہاؤسنگ اینڈ ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے ساتھ اندراج کرنے والوں کو دیے جائیں گے اور دو ہزار فلیٹ لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کہ ساتھ اندراج کرنے والوں کو دیے جائیں گے۔

تفصیلات کے مطابق ایک فلیٹ کی قیمت 4.7 ملین روپے ہے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




لاہور سینٹرل بزنس ڈسٹرکٹ: پہلے 5 پلاٹس کی نیلامی 4 اگست کو کرنے کا اعلان


Post Views:
2

لاہور: لاہور سینٹرل بزنس ڈسٹرکٹ میں پہلے 5 پلاٹس کی نیلامی 4 اگست کو کی جائیگی۔

اس ضمن میں ٹارگٹ ریوینیو 13 ارب روپے رکھا گیا ہے۔

وزیرِ اعظم عمران خان کے زیرِ صدارت لاہور سینٹرل بزنس ڈسٹرکٹ اور راوی سٹی کا ریویو اجلاس ہوا جس میں یہ فیصلہ کیا گیا۔

میٹنگ میں وزیرِ مملکت برائے اطلاعات فرخ حبیب، وزیرِ اعظم کے معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل، چیئرمین نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی لیفٹننٹ جنرل (ر) انور علی حیدر اور وائس چیئرمین ایل ڈی اے شیخ محمد عمران نے شرکت کی۔

میٹنگ میں یہ فیصلہ بھی کیا گیا کہ سینٹرل بزنس ڈسٹرکٹ میں پلاٹوں کی نیلامی کے دوسرے مرحلے کا انعقاد بھی جلد کیا جائے گا۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




چوتھا صنعتی انقلاب اور ڈیجیٹل بزنس ماڈل کی افادیت


Post Views:
8

ڈیجیٹل سٹریٹجسٹ اور پاکستان میں گوگل کے سابق نمائندے بدر خوشنود کہتے ہیں کہ ‘ایک چھوٹا کاروبار، ون مین شو، اگر اچھے طریقے سے منصوبہ بندی کرے تو کم از کم مہینے میں لاکھ، دو لاکھ یا اس سے زائد قیمت کی مصنوعات آن لائن فروخت کر سکتا ہے۔’

ڈیجیٹل پلیٹ فارم بزنس ماڈل کمپنیوں کو روایتی اثاثہ جات میں سرمایہ کاری کیے بغیر اپنے صارفین کی خدمت کرنے کے لائق بناتا ہے۔ ڈیجیٹل کمپنیاں محض متعدد فریقین کے درمیان رابطہ کار کا کردار ادا کرتی ہیں۔ سوشل میڈیا مارکیٹنگ کی حکمت عملی کو باقاعدگی سے اپنانے اور ڈیجیٹل پلیٹ فارم  بزنس ماڈل  پر اپنے کاروبار کو منتقل کر کے آپ یقینی  طور پر ترقی کی بلندیوں کو چھو سکتے ہیں ۔

دنیا کی10سب سے زیادہ قیمتی اور قابلِ قدرکمپنیوں میں 70 فیصد (ایمیزون، علی بابا، ایپل، مائیکروسافٹ وغیرہ) اور ایک ارب ڈالر سے زائد مالیت رکھنے والے 70 فیصد اسٹارٹ اپس اس بزنس ماڈل پر عمل پیرا ہیں۔ توقع ہے کہ 2030ء تک 30 فیصد عالمی معاشی سرگرمیاں ڈیجیٹل پلیٹ فارم بزنس ماڈل کے تحت وقوع پذیر ہوں گی، تاہم اس وقت 5 فیصد سے بھی کم روایتی کمپنیاں اس سلسلے میں کوئی مربوط لائحہ عمل رکھتی ہیں۔ اس کی وجہ غالباً یہ ہے کہ موجودہ کمپنیوں کے بورڈ پر موجود 10 فیصد سے بھی کم اراکین ایسے ہیں جو ڈیجیٹل پلیٹ فارم بزنس ماڈل کی معیشت کو پوری طرح سمجھنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

تخلیق کاروں کے لئے پاکستان کا پہلا ڈیجیٹل پلیٹ فارم جس کی قیمت 20 ملین امریکی ڈالر ہے، پاکستان سے ڈیجیٹل دنیا میں سب سے تیزی سے ترقی کرنے والی کمپنیوں میں شامل ہونے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

پاکستان میں 76 ملین سے زیادہ انٹرنیٹ استعمال کنندہ ہیں اور 37 ملین فعال سوشل میڈیا اکاؤنٹس معیشت میں ترقی کا ایک بہترین ذریعہ ہیں۔ موبائل انٹرنیٹ کی شرح صارفین کے لئے زیادہ سے زیادہ قیمت دینے کے ساتھ عوام کے لئے تفریح کا ذریعہ رہی ہے۔ تاہم، ملکی پلیٹ فارم کی کمی جو مقامی مواد کو آگے بڑھا سکے ایک بڑا مسئلہ رہی ہے ۔

جیسے جیسے چوتھا صنعتی انقلاب عالمی معیشت میں سرائیت کرتا جا رہا ہے اس میں معیشت کے تمام شعبوں اور دنیا کے ہرحصے میں سرگرم کاروباری سربراہان کو دو طرح کی صورتحال کا سامنا ہے۔ ڈیجیٹل بزنس ماڈل بلاشبہ ایک بہت بڑا ٹاسک ہے جسے بیک وقت لاگو کرنے کی بجائے اس پر مختلف حصوں میں عمل درآمد کیا جاسکتا ہے۔ کارپوریٹ لیڈرز کاروبار کے روایتی طریقوں کو ڈیجیٹل پلیٹ فارم بزنس ماڈل پر منتقل کرنے کے لیے درج ذیل لائحہ عمل اختیار کرسکتے ہیں۔

کارپوریٹ سیکٹر میں ڈیجیٹل بزنس ماڈل سے متعلق مکمل آگاہی کی فراہمی

آج کے کئی کارپوریٹ لیڈرز یہ جانتے ہی نہیں کہ وہ کیا نہیں جانتے۔ ڈیجیٹل پلیٹ فارم ایک نیا رجحان ہے جس کےبارے میں کم افراد کو معلوم ہے۔ کارپوریٹ لیڈرز کو ڈیجیٹل پلیٹ فارمز کی مکمل آگاہی فراہم کرنے کی ضرورت ہے تاکہ وہ کاروباری دنیا میں مثبت سوچ کے ساتھ ترقی کی راہ پر گامزن ہونے اور شراکتی کاروباری ماحول میں میں کام کرنے کے لیے ذہنی اور عملی طور پر تیار ہوسکیں۔

کارپوریٹ ماڈل کو ڈیجیٹل اسٹریٹجی میں فرق

کارپوریٹ لیڈرز کو جب نئے مواقع اور خطرات کا ادراک ہوگا تب ہی وہ اپنے ادارے کی نمو کے لیے تیار کردہ لائحہ عمل میں ڈیجیٹل سوچ کو شامل کرسکیں گے۔ اس کے لیے اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ محتاط روابط اور ابلاغ پیدا کرنے کی ضرورت ہوگی۔ پانچ سال قبل ایک چینی کمپنی  نے اعلان کیا تھا کہ وہ خود کو انشورنس کمپنی تصور نہیں کرتی بلکہ وہ خود کو ’فنانشل سروسز لائسنس یافتہ ٹیکنالوجی کمپنی‘ سمجھتی ہے۔

ڈیجیٹل پلیٹ فارم بزنس ماڈل میں سرمایہ کاری

وقت آگیا ہے کہ آپ اپنے وسائل ڈیجیٹل پلیٹ فارمز کی طرف منتقل کریں جس سے کمپنی کے تمام اسٹیک ہولڈرز مستفید ہوں گے۔ موجودہ وسائل میں سے کچھ حصہ نکال کر ڈیجیٹل میں خرچ کرنا آپ کے مستقبل کے لائحہ عمل کو حقیقت میں بدلنے کا سب سے بہترین طریقہ ہے۔ وال مارٹ نے اسی لائحہ عمل کے تحت بھاری سرمایہ کاری کرتے ہوئے جیٹ ڈاٹ کام اور فلپ کارٹ کو خریدا ہے۔

چوتھے صنعتی انقلاب کا کارپوریٹ سیکٹر میں کردار

ڈیجیٹل پلیٹ فارم بزنس ماڈل، کمپنیوں کو روایتی اثاثہ جات میں سرمایہ کاری کیے بغیر اپنے صارفین کی خدمت کرنے کے لائق بناتا ہے۔ ڈیجیٹل کمپنیاں محض متعدد فریقین کے درمیان رابطہ کار کا کردار ادا کرتی ہیں۔

کاروبار کرنے کے روایتی طریقوں کو فوری طور پر بدلنے کی ضرورت ہے۔ مستقبل (اور کسی حد تک حال) ڈیجیٹل ماڈؒل کا ہے۔ کورونا وائرس وبائی مرض نے اس رجحان کو مزید تقویت بخشی ہے۔ تاہم 10 فیصد سے بھی کم کاروباری اداروں کے موجودہ ’بزنس ماڈلز‘ ڈیجیٹل دور کے تقاضے پورے کرنے کے قابل ہیں۔ کسٹمر ویلیو، آمدنی میں اضافے اور مارکیٹ ویلیوایشن کے لحاظ سے موجودہ وقت میں کامیاب ترین بزنس ماڈل ’ڈیجیٹل پلیٹ فارم بزنس ماڈل‘ ہے۔ نتیجتاً، آج کے کارپوریٹ لیڈرز کی ایک بڑی تعداد چوتھے صنعتی انقلاب کے لیے درکار تبدیلیوں کو اپنے اداروں میں متعارف کرانے کے لیے پراعتماد نہیں۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




کے پی حکومت نے ترقیاتی منصوبوں کی بروقت تکمیل کے لیے مانیٹرنگ سسٹم کا قیام کردیا


Post Views:
12

پشاور: خیبر پختونخوا حکومت نے صوبے میں جاری ترقیاتی منصوبوں کی بروقت تکمیل کے لیے مانیٹرنگ سسٹم کا قیام کردیا ہے۔

اس ضمن میں پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ نے متعلقہ محکموں کو احکامات جاری کیے ہیں کہ وہ تمام تر انتظامات مکمل کریں

پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ سے منظوری کے بعد جاری ترقیاتی منصوبوں کی اسپیشل مانیٹرنگ کی جائے گی۔

پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ کا کہنا ہے کہ اس اقدام سے تمام تر منصوبوں کی پیش رفت اور بروقت تکمیل کی بہتر جانچ یقینی ہوگی۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




کریم بلاک انڈرپاس منصوبے کی تعمیراتی لاگت میں20 کروڑ روپے کا اضافہ


Post Views:
2

لاہور: بڑھتی ہوئی مہنگائی اور میگا پراجیکٹ پر تعمیراتی میٹریل کی قیمتوں میں اضافے کے باعث علامہ اقبال ٹاون کے علاقے کریم بلاک میں انڈرپاس منصوبے کی تعمیراتی لاگت میں 20 کروڑ روپے کا اضافہ ہو گیا۔

تفصیلات کے مطابق ایل ڈی اے حکام کی جانب سے مذکورہ منصوبے پر نظرثانی شدہ پی سی ون دستاویز حکومت پنجاب کو بھجوا دیا گیا ہے۔

20 کروڑ روپے کے ریکارڈ اضافے کی وجہ سے کریم بلاک انڈرپاس منصوبے کی تعمیراتی لاگت کا مجموعی ابتداءی تخمینہ 2 ارب 55 کروڑ روپے تک پہنچ  گیا ہے۔

نظرثانی شدہ پی سی ون کے مطابق سریا کی قیمت میں مجموعی طور پر 31 فیصد جبکہ سیمنٹ کی قیمت میں 17 فیصد اور اسی طرح اسفالٹ کے ریٹس میں بھی غیر یقینی حد تک اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




انوائرمینٹل پروٹیکشن ایجنسی کی وفاقی ترقیاتی ادارے کو ماحولیاتی قواعد و ضوابط یقینی بنانے کی ہدایت


Post Views:
5

اسلام آباد: پاکستان انوائرمینٹل پروٹیکشن ایجنسی نے وفاقی ترقیاتی ادارے (سی ڈی اے) کو ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ آئی جے پی روڈ کی بحالی کے ترقیاتی منصوبے پر کام کے دوران ماحولیاتی قواعد و ضوابط کو یقینی بنائے۔

مذکورہ منصوبے پر ترقیاتی کاموں کے اجراء سے پیدا ہونے والے ممکنہ ماحولیاتی اثرات سے متعلق سماعت پاکستان انوائرمینٹل پروٹیکشن ایجنسی کے مرکزی سیکرٹریٹ میں منعقد ہوئی جس میں سی ڈی اے کے متعلقہ حکام نے شرکت کی۔

سماعت کے دوران سی ڈی اے حکام نے انوائرمینٹل پروٹیکشن ایجنسی کو بتایا کہ مذکورہ منصوبے کی کُل لاگت کا ابتدائی تخمینہ 6 ارب 90 کروڑ روپے لگایا گیا ہے جبکہ 12 کروڑ روپے ماحولیاتی تحفظ کے لیے مختص کیے گئے ہیں۔

سی ڈی اے حکام کے مطابق آئی جے پی روڈ کے روٹ پر 8000 سے زائد درخت لگائے جائیں گے جبکہ یہ ترقیاتی منصوبہ 18 ماہ کی قلیل مدت میں مکمل کر لیا جائے گا۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




وزیراعظم کی ہدایت پر سٹیزن کلب کو عوامی مقاصد کے لیے فعال بنانے سے متعلق اعلیٰ سطحی کمیٹی قائم


Post Views:
0

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر ایف نائن پارک میں سٹیزن کلب کی عمارت کو عوامی مقاصد کے لیے بروئے کار لانے سے متعلق امور یقینی بنانے کے لیے ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی قائم کر دی گئی ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے حال ہی میں ایف نائن پارک میں سٹیزن کلب کا دورہ کیا اس موقع پر چئیرمین سی ڈی اے عامر احمد علی بھی وزیر اعظم کے ہمراہ موجود تھے۔

کابینہ کے حالیہ اجلاس میں سٹیزن کلب کی عمارت کو عوامی مقاصد کے لئے استعمال میں لانے سے متعلق امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا تھا اور وزیراعظم کا دورہ بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔

وزیرِ اعظم کی ہدایت پر معروف آرکیٹیک نیر علی دادا اور چئیرمین سی ڈی اے پر مشتمل کمیٹی قائم کر دی گءی ہے جو اپنی سفارشات وزیر اعظم کوجلد پیش کرے گی۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔

 




وزیراعظم کی ہدایت پر سٹیزن کلب کو عوامی مقاصد کے لیے فعال بنانے سے متعلق اعلیٰ سطحی کمیٹی قائم


Post Views:
6

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر ایف نائن پارک میں سٹیزن کلب کی عمارت کو عوامی مقاصد کے لیے بروئے کار لانے سے متعلق امور یقینی بنانے کے لیے ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی قائم کر دی گئی ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے حال ہی میں ایف نائن پارک میں سٹیزن کلب کا دورہ کیا اس موقع پر چئیرمین سی ڈی اے عامر احمد علی بھی وزیر اعظم کے ہمراہ موجود تھے۔

کابینہ کے حالیہ اجلاس میں سٹیزن کلب کی عمارت کو عوامی مقاصد کے لئے استعمال میں لانے سے متعلق امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا تھا اور وزیراعظم کا دورہ بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔

وزیرِ اعظم کی ہدایت پر معروف آرکیٹیک نیر علی دادا اور چئیرمین سی ڈی اے پر مشتمل کمیٹی قائم کر دی گءی ہے جو اپنی سفارشات وزیر اعظم کوجلد پیش کرے گی۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔




سی ڈی اے کا سٹریٹ لائٹس کی بحالی کا کام تیز کرنے کا فیصلہ


Post Views:
0

اسلام آباد: کیپیٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) نے اسلام آباد میں سٹریٹ لائٹس کی بحالی کا کام تیز کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق کام کی رفتار تیز کرنے کا فیصلہ حالیہ بارشوں کے پیشِ نظر کیا گیا تاکہ شہریوں کسی قسم کی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

سی ڈی اے کے مطابق شہرِ اقتدار میں 85 فیصد سٹریٹ لائٹس کام کررہی ہیں جبکہ 87 فیصد ٹریفک سگنل بھی کام کررہے ہیں۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔